لوٹ آئے گا کسی شام یہی لگتا ہے

شبانہ یوسف

لوٹ آئے گا کسی شام یہی لگتا ہے

شبانہ یوسف

MORE BY شبانہ یوسف

    لوٹ آئے گا کسی شام یہی لگتا ہے

    جگمگائیں گے در و بام یہی لگتا ہے

    زیست کی راہ میں تنہا جو بھٹکتی ہوں میں

    یہ وفاؤں کا ہے انعام یہی لگتا ہے

    ایک مدت سے مسلسل ہوں سفر میں لیکن

    منزل شوق ہے دو گام یہی لگتا ہے

    اک کلی بر سر پیکار خزاؤں سے ہے

    یہ نہیں واقف انجام یہی لگتا ہے

    میرے آنے کی خبر سن کے وہ دوڑا آتا

    اس کو پہنچا نہیں پیغام یہی لگتا ہے

    مجھ کو بھی کر دے گا رسوا وہ زمانے بھر میں

    خود بھی ہو جائے گا بدنام یہی لگتا ہے

    بھولنا اس کو ہے آسان شبانہؔ لیکن

    مجھ سے ہوگا نہیں یہ کام یہی لگتا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY