میں سوچتا ہوں اگر اس طرف وہ آ جاتا

آفتاب حسین

میں سوچتا ہوں اگر اس طرف وہ آ جاتا

آفتاب حسین

MORE BYآفتاب حسین

    میں سوچتا ہوں اگر اس طرف وہ آ جاتا

    چراغ عمر کی لو اک ذرا بڑھا جاتا

    عجیب بھول بھلیاں ہے راستہ دل کا

    یہاں تو خضر بھی ہوتا تو ڈگمگا جاتا

    سو اپنے ہاتھ سے دیں بھی گیا ہے دنیا بھی

    کہ اک سرے کو پکڑتے تو دوسرا جاتا

    مگر نہیں ہے وہ مصروف ناز اتنا بھی

    کبھی کبھی تو کوئی رابطہ کیا جاتا

    کبھی وہ پاس بلاتا تو یہ دل درویش

    بس اک اشارۂ ابرو پہ جھومتا جاتا

    پلٹ رہا ہوں اسی یار مہرباں کی طرف

    اب اس قدر بھی نہیں بے وفا ہوا جاتا

    پلٹ گیا انہیں قدموں سے آفتاب حسینؔ

    کہاں تلک وہی حالات دیکھتا جاتا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    میں سوچتا ہوں اگر اس طرف وہ آ جاتا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY