موسم گل ہے ترے سرخ دہن کی حد تک

عمران الحق چوہان

موسم گل ہے ترے سرخ دہن کی حد تک

عمران الحق چوہان

MORE BYعمران الحق چوہان

    موسم گل ہے ترے سرخ دہن کی حد تک

    یا مرے زخموں سے آراستہ تن کی حد تک

    وقت ہر زخم کو بھر دیتا ہے کچھ بھی کیجے

    یاد رہ جاتی ہے ہلکی سی چبھن کی حد تک

    نہ کسی گل سے تعلق نہ کسی خار سے بیر

    ربط گل زار سے ہے بوئے سمن کی حد تک

    وہ مجھے بھول نہیں پایا ابھی تک یعنی

    میں اسے یاد ہوں ماتھے کی شکن کی حد تک

    بات اک اور پس پردۂ الفاظ بھی تھی

    اس نے خط میرا پڑھا لطف سخن کی حد تک

    مہر و مہتاب کی خواہش سے مجھے کیا لینا

    مطمئن دل ہے جب اک سیم بدن کی حد تک

    یہ جو کہنا ہے کہ ہر حسن جفا پیشہ ہے

    ایک تہمت ہے مرے رشک عدن کی حد تک

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY