مرا دل مبتلا ہے جھانولی کا

عبدالوہاب یکروؔ

مرا دل مبتلا ہے جھانولی کا

عبدالوہاب یکروؔ

MORE BYعبدالوہاب یکروؔ

    مرا دل مبتلا ہے جھانولی کا

    تری انکھیاں سلونی سانولی کا

    گیا تن سوکھ انکھیاں تر ہیں غم سیں

    ہوا ہوں شاہ خشکی و تری کا

    جبھی تو پان کھا کر مسکرایا

    تبھی دل کھل گیا گل کی کلی کا

    کہتا ہوں وصف دنداں و مسی کے

    مزا لیتا ہوں اب تل چاولی کا

    نہیں ہے ریختے کے بحر کا پار

    سمجھ مت شعر اس کوں پارسی کا

    جو رو پاؤ تو دل میرا دکھاؤ

    سنا ہے شوخ خواہاں آرسی کا

    مجھے کہتے ہیں یکروؔ سب محباں

    کہ بندہ جاں سیں ہوں حضرت علیؔ کا

    مأخذ :
    • کتاب : diwan-e-yakro (Pg. 3)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY