مری وفاؤں کا نشہ اتارنے والا

وسیم بریلوی

مری وفاؤں کا نشہ اتارنے والا

وسیم بریلوی

MORE BYوسیم بریلوی

    مری وفاؤں کا نشہ اتارنے والا

    کہاں گیا مجھے ہنس ہنس کے ہارنے والا

    ہماری جان گئی جائے دیکھنا یہ ہے

    کہیں نظر میں نہ آ جائے مارنے والا

    بس ایک پیار کی بازی ہے بے غرض بازی

    نہ کوئی جیتنے والا نہ کوئی ہارنے والا

    بھرے مکاں کا بھی اپنا نشہ ہے کیا جانے

    شراب خانے میں راتیں گزارنے والا

    میں اس کا دن بھی زمانے میں بانٹ کر رکھ دوں

    وہ میری راتوں کو چھپ کر گزارنے والا

    وسیمؔ ہم بھی بکھرنے کا حوصلہ کرتے

    ہمیں بھی ہوتا جو کوئی سنوارنے والا

    مآخذ:

    • کتاب : Mera Kiya (Pg. 97)
    • Author : Waseem Barelvi
    • مطبع : Maktaba Jamia Ltd. (2007)
    • اشاعت : 2007

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY