محبت میں شکایت کر رہا ہوں

تری پراری

محبت میں شکایت کر رہا ہوں

تری پراری

MORE BYتری پراری

    محبت میں شکایت کر رہا ہوں

    شکایت میں محبت کر رہا ہوں

    سنا ہے عادتیں مرتی نہیں ہیں

    سو خود کو ایک عادت کر رہا ہوں

    وہ یوں بھی خوب صورت ہے مگر میں

    اسے اور خوب صورت کر رہا ہوں

    کسے معلوم کب آئے قیامت

    سو ہر دن اک قیامت کر رہا ہوں

    اداسی سے بھری آنکھیں ہیں اس کی

    میں صدیوں سے زیارت کر رہا ہوں

    ضرورت ہی نہیں میری کسی کو

    سو خود کو اپنی چاہت کر رہا ہوں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY