مجھے خود سے بھی کھٹکا سا لگا تھا

انور مسعود

مجھے خود سے بھی کھٹکا سا لگا تھا

انور مسعود

MORE BYانور مسعود

    مجھے خود سے بھی کھٹکا سا لگا تھا

    مرے اندر بھی اک پہرا لگا تھا

    ابھی آثار سے باقی ہیں دل میں

    کبھی اس شہر میں میلہ لگا تھا

    جدا ہوگی کسک دل سے نہ اس کی

    جدا ہوتے ہوئے اچھا لگا تھا

    اکٹھے ہو گئے تھے پھول کتنے

    وہ چہرہ ایک باغیچہ لگا تھا

    پئے جاتا تھا انورؔ آنسوؤں کو

    عجب اس شخص کو چسکا لگا تھا

    مآخذ:

    • کتاب : ik daraicha ik chirag (Pg. 92)
    • Author : ANWAR MASOOD
    • مطبع : Dost Publications (2008)
    • اشاعت : 2008

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY