نہیں ممکن لب عاشق سے حرف مدعا نکلے

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

نہیں ممکن لب عاشق سے حرف مدعا نکلے

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

MORE BYوحشتؔ رضا علی کلکتوی

    نہیں ممکن لب عاشق سے حرف مدعا نکلے

    جسے تم نے کیا خاموش اس سے کیا صدا نکلے

    قیامت اک بپا ہے سینۂ مجروح الفت میں

    نہ تیر دلنشیں نکلے نہ جان مبتلا نکلے

    تمہارے خوگر بیداد کو کیا لطف کی حاجت

    وفا ایسی نہ کرنا تم جو آخر کو جفا نکلے

    گماں تھا کام دل اغیار تم سے پاتے ہیں لیکن

    ہماری طرح وہ بھی کشتۂ تیغ جفا نکلے

    زبردستی غزل کہنے پہ تم آمادہ ہو وحشتؔ

    طبیعت جب نہ ہو حاضر تو پھر مضمون کیا نکلے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نہیں ممکن لب عاشق سے حرف مدعا نکلے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY