نہر جس لشکر کی نگرانی میں تب تھی اب بھی ہے

مرتضیٰ برلاس

نہر جس لشکر کی نگرانی میں تب تھی اب بھی ہے

مرتضیٰ برلاس

MORE BYمرتضیٰ برلاس

    نہر جس لشکر کی نگرانی میں تب تھی اب بھی ہے

    خیمے والوں کی جو بستی تشنہ لب تھی اب بھی ہے

    اڑ رہے ہیں وقت کی رفتار سے مغرب کی سمت

    وقت آغاز سفر جو تیرہ شب تھی اب بھی ہے

    وقت جیسے ایک ہی ساعت پہ آ کے رک گیا

    پہلے جس شدت سے جو دل میں طلب تھی اب بھی ہے

    ہم شکایت آنکھ کی پلکوں سے کرتے کس طرح

    داستان ظلم ورنہ یاد سب تھی اب بھی ہے

    حسن میں فطری حجابانہ روش اب ہو نہ ہو

    عشق کے مسلک میں جو حد ادب تھی اب بھی ہے

    روز و شب بدلیں گے اپنے کس طرح آئے یقیں

    صورت حالات جو پہلے عجب تھی اب بھی ہے

    ہیں بقا کے وسوسے میں ابتدا سے مبتلا

    دل میں اک تشویش سی جو بے سبب تھی اب بھی ہے

    نام اس کا آمریت ہو کہ ہو جمہوریت

    منسلک فرعونیت مسند سے تب تھی اب بھی ہے

    مأخذ :
    • کتاب : kulliyat -e-Murtaza Barlas (Pg. 299)
    • Author : Murtaza Barlas
    • مطبع : Alhamd Publication Lahore (2011)
    • اشاعت : 2011

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY