نظر میں اک جہاں ہے اور تمنا کا جہاں وہ بھی

مجید اختر

نظر میں اک جہاں ہے اور تمنا کا جہاں وہ بھی

مجید اختر

MORE BYمجید اختر

    نظر میں اک جہاں ہے اور تمنا کا جہاں وہ بھی

    جو طیر فکر ہے رہتا ہے ہر دم پرفشاں وہ بھی

    ذرا ٹھہرو کہ پڑھ لوں کیا لکھا موسم کی بارش نے

    مری دیوار پر لکھتی رہی ہے داستاں وہ بھی

    محبت میں دلوں پر جانے کب یہ سانحہ گزرا

    جگہ شک نے بنا لی اور ہمارے درمیاں وہ بھی

    سنو اے رفتگاں رہتا نہیں کچھ فاصلہ اتنا

    بس اک دیوار باقی ہے مری دیوار جاں وہ بھی

    جہاں پر نارسائی ہی ریاضت کا صلہ ٹھہرے

    ہمیں دل نے سکھا رکھا ہے اک کار زیاں وہ بھی

    نئے امکان کی جانب سفر میں جب تردد ہو

    صدا کانوں میں آتی ہے صدائے کن فکاں وہ بھی

    کسی دل دار ساعت میں کسی محبوب لہجے کا

    دکھاتی ہے تماشہ اور مری عمر رواں وہ بھی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY