نگاہ یار جسے آشنائے راز کرے

حسرتؔ موہانی

نگاہ یار جسے آشنائے راز کرے

حسرتؔ موہانی

MORE BYحسرتؔ موہانی

    نگاہ یار جسے آشنائے راز کرے

    وہ اپنی خوبی قسمت پہ کیوں نہ ناز کرے

    دلوں کو فکر دوعالم سے کر دیا آزاد

    ترے جنوں کا خدا سلسلہ دراز کرے

    خرد کا نام جنوں پڑ گیا جنوں کا خرد

    جو چاہے آپ کا حسن کرشمہ ساز کرے

    ترے ستم سے میں خوش ہوں کہ غالباً یوں بھی

    مجھے وہ شامل ارباب امتیاز کرے

    غم جہاں سے جسے ہو فراغ کی خواہش

    وہ ان کے درد محبت سے ساز باز کرے

    امیدوار ہیں ہر سمت عاشقوں کے گروہ

    تری نگاہ کو اللہ دل نواز کرے

    ترے کرم کا سزاوار تو نہیں حسرتؔ

    اب آگے تیری خوشی ہے جو سرفراز کرے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نگاہ یار جسے آشنائے راز کرے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY