نقوش عمر گزشتہ سمیٹ لاتے ہیں

کوثر جائسی

نقوش عمر گزشتہ سمیٹ لاتے ہیں

کوثر جائسی

MORE BYکوثر جائسی

    نقوش عمر گزشتہ سمیٹ لاتے ہیں

    یہ رنگ رنگ کے بادل کہاں سے آتے ہیں

    کبھی کبھی سفر زندگی سے روٹھ کے ہم

    ترے خیال کے سائے میں بیٹھ جاتے ہیں

    تصورات کے حسرت کدے میں کون آیا

    چراغ تا حد احساس جلتے جاتے ہیں

    ہمیں ہے ڈر کوئی تار امید ٹوٹ نہ جائے

    سنبھل سنبھل کے انہیں حال دل سناتے ہیں

    بنا گئے ہیں وہ یوں ساز آرزو گھر کو

    کہ آج تک در و دیوار گنگناتے ہیں

    انہیں سے ہے مرے اشکوں کی آبرو کوثرؔ

    جو آب و رنگ غزل کو غزل بناتے ہیں

    مأخذ :
    • کتاب : Nishat-e-Fikr (Pg. 111)
    • Author : Allama Kausar Jayasi
    • مطبع : Jigar Academy, Regd. Kanpur (2006)
    • اشاعت : 2006

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY