پابند احتیاط وفا بھی نہ ہو سکے

مخمور جالندھری

پابند احتیاط وفا بھی نہ ہو سکے

مخمور جالندھری

MORE BYمخمور جالندھری

    پابند احتیاط وفا بھی نہ ہو سکے

    ہم قید ضبط غم سے رہا بھی نہ ہو سکے

    دار و مدار عشق وفا پر ہے ہم نشیں

    وہ کیا کرے کہ جس سے وفا بھی نہ ہو سکے

    گو عمر بھر نہ مل سکے آپس میں ایک بار

    ہم ایک دوسرے سے جدا بھی نہ ہو سکے

    جب جزو کی صفات میں کل کی صفات ہیں

    پھر وہ بشر ہی کیا جو خدا بھی نہ ہو سکے

    یہ فیض عشق تھا کہ ہوئی ہر خطا معاف

    وہ خوش نہ ہو سکے تو خفا بھی نہ ہو سکے

    وہ آستان دوست پہ کیا سر جھکائے گا

    جس سے بلند دست دعا بھی نہ ہو سکے

    یہ احترام تھا نگہ شوق کا جو تم

    بے پردہ ہو سکے جلوہ نما بھی نہ ہو سکے

    مخمورؔ کچھ نہ پوچھیے مجبورئ حیات

    اچھی طرح خراب فنا بھی نہ ہو سکے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY