پردہ آنکھوں سے ہٹانے میں بہت دیر لگی

یاسمین حمید

پردہ آنکھوں سے ہٹانے میں بہت دیر لگی

یاسمین حمید

MORE BYیاسمین حمید

    پردہ آنکھوں سے ہٹانے میں بہت دیر لگی

    ہمیں دنیا نظر آنے میں بہت دیر لگی

    نظر آتا ہے جو ویسا نہیں ہوتا کوئی شخص

    خود کو یہ بات بتانے میں بہت دیر لگی

    ایک دیوار اٹھائی تھی بڑی عجلت میں

    وہی دیوار گرانے میں بہت دیر لگی

    آگ ہی آگ تھی اور لوگ بہت چاروں طرف

    اپنا تو دھیان ہی آنے میں بہت دیر لگی

    جس طرح ہم کبھی ہونا ہی نہیں چاہتے تھے

    خود کو پھر ویسا بنانے میں بہت دیر لگی

    یہ ہوا تو کہ ہر اک شے کی کشش ماند پڑی

    مگر اس موڑ پہ آنے میں بہت دیر لگی

    RECITATIONS

    عذرا نقوی

    عذرا نقوی

    عذرا نقوی

    Parda ankhon se hatane mein bhut der lagi عذرا نقوی

    مأخذ :
    • کتاب : Ghazal Calendar-2015 (Pg. 27.12.2015)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY