قصر ویران ہوا جاتا ہے

شکیل بدایونی

قصر ویران ہوا جاتا ہے

شکیل بدایونی

MORE BYشکیل بدایونی

    قصر ویران ہوا جاتا ہے

    دل پریشان ہوا جاتا ہے

    حرم و دیر کے جلووں کی قسم

    کفر ایمان ہوا جاتا ہے

    تاب نظارہ الٰہی توبہ

    جلوہ حیران ہوا جاتا ہے

    نالہ آغوش اثر تک آ کر

    خود پشیمان ہوا جاتا ہے

    بے پیے شیخ فرشتہ تھا مگر

    پی کے انسان ہوا جاتا ہے

    دل ہے آمادۂ تکمیل نشاط

    غم کا سامان ہوا جاتا ہے

    کچھ نہیں ہستیٔ پروانہ مگر

    بزم کی جان ہوا جاتا ہے

    اللہ اللہ کہ انہیں کا پرتو

    ان پہ قربان ہوا جاتا ہے

    ہر ورق شرح محبت کا شکیلؔ

    اپنا دیوان ہوا جاتا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY