روز وحشت کوئی نئی مرے دوست

عبدالرحمان واصف

روز وحشت کوئی نئی مرے دوست

عبدالرحمان واصف

MORE BYعبدالرحمان واصف

    روز وحشت کوئی نئی مرے دوست

    اس کو کہتے ہیں زندگی مرے دوست

    علم احساس آگہی مرے دوست

    ساری باتیں ہیں کاغذی مرے دوست

    دیکھ اظہارئیے بدل گئے ہیں

    یہ ہے اکیسویں صدی مرے دوست

    کیا چراغوں کا تذکرہ کرنا

    روشنی گھٹ کے مر گئی مرے دوست

    ہاں کسی المیے سے کم کہاں ہے

    مری حالت تری ہنسی مرے دوست

    ساتھ دینے کی بات سارے کریں

    اور نبھائے کوئی کوئی مرے دوست

    اتنی گلیاں اگ آئیں بستی میں

    بھول بیٹھا تری گلی مرے دوست

    لازمی ہے خرد کی بیداری

    نیند لیکن کبھی کبھی مرے دوست

    موضوعات :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY