سب لوگ جدھر وہ ہیں ادھر دیکھ رہے ہیں

داغؔ دہلوی

سب لوگ جدھر وہ ہیں ادھر دیکھ رہے ہیں

داغؔ دہلوی

MORE BY داغؔ دہلوی

    سب لوگ جدھر وہ ہیں ادھر دیکھ رہے ہیں

    ہم دیکھنے والوں کی نظر دیکھ رہے ہیں

    تیور ترے اے رشک قمر دیکھ رہے ہیں

    ہم شام سے آثار سحر دیکھ رہے ہیں

    میرا دل گم گشتہ جو ڈھونڈا نہیں ملتا

    وہ اپنا دہن اپنی کمر دیکھ رہے ہیں

    کوئی تو نکل آئے گا سر باز محبت

    دل دیکھ رہے ہیں وہ جگر دیکھ رہے ہیں

    ہے مجمع اغیار کہ ہنگامۂ محشر

    کیا سیر مرے دیدۂ تر دیکھ رہے ہیں

    اب اے نگہ شوق نہ رہ جائے تمنا

    اس وقت ادھر سے وہ ادھر دیکھ رہے ہیں

    ہر چند کہ ہر روز کی رنجش ہے قیامت

    ہم کوئی دن اس کو بھی مگر دیکھ رہے ہیں

    آمد ہے کسی کی کہ گیا کوئی ادھر سے

    کیوں سب طرف راہ گزر دیکھ رہے ہیں

    تکرار تجلی نے ترے جلوے میں کیوں کی

    حیرت زدہ سب اہل نظر دیکھ رہے ہیں

    نیرنگ ہے ایک ایک ترا دید کے قابل

    ہم اے فلک شعبدہ گر دیکھ رہے ہیں

    کب تک ہے تمہارا سخن تلخ گوارا

    اس زہر میں کتنا ہے اثر دیکھ رہے ہیں

    کچھ دیکھ رہے ہیں دل بسمل کا تڑپنا

    کچھ غور سے قاتل کا ہنر دیکھ رہے ہیں

    اب تک تو جو قسمت نے دکھایا وہی دیکھا

    آئندہ ہو کیا نفع و ضرر دیکھ رہے ہیں

    پہلے تو سنا کرتے تھے عاشق کی مصیبت

    اب آنکھ سے وہ آٹھ پہر دیکھ رہے ہیں

    کیوں کفر ہے دیدار صنم حضرت واعظ

    اللہ دکھاتا ہے بشر دیکھ رہے ہیں

    خط غیر کا پڑھتے تھے جو ٹوکا تو وہ بولے

    اخبار کا پرچہ ہے خبر دیکھ رہے ہیں

    پڑھ پڑھ کے وہ دم کرتے ہیں کچھ ہاتھ پر اپنے

    ہنس ہنس کے مرے زخم جگر دیکھ رہے ہیں

    میں داغؔ ہوں مرتا ہوں ادھر دیکھیے مجھ کو

    منہ پھیر کے یہ آپ کدھر دیکھ رہے ہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY