شب سیاہ پہ وا روشنی کا باب تو ہو

آفتاب حسین

شب سیاہ پہ وا روشنی کا باب تو ہو

آفتاب حسین

MORE BYآفتاب حسین

    شب سیاہ پہ وا روشنی کا باب تو ہو

    مگر یہ شرط ہے کوئی ستارہ یاب تو ہو

    میں حرف بن کے تری روح میں اتر جاؤں

    مرا سخن تری محفل میں باریاب تو ہو

    سواد شب کے سفر میں ستارہ وار چلوں

    ترے جمال کی لو میری ہم رکاب تو ہو

    کسی طرح تو گھٹے دل کی بے قراری بھی

    چلو وہ چشم نہیں کم سے کم شراب تو ہو

    اساس جسم اٹھاؤں نئے سرے سے مگر

    یہ سوچتا ہوں کہ مٹی مری خراب تو ہو

    وہ آفتابؔ لب بام بھی اتر آئے

    مگر کسی میں اسے دیکھنے کی تاب تو ہو

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    شب سیاہ پہ وا روشنی کا باب تو ہو نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY