شعاع زر نہ ملی رنگ شاعرانہ ملا

حسن عزیز

شعاع زر نہ ملی رنگ شاعرانہ ملا

حسن عزیز

MORE BY حسن عزیز

    شعاع زر نہ ملی رنگ شاعرانہ ملا

    متاع نور سے کیا مجھ کو منصفانہ ملا

    میں کس سے پوچھوں کہ اس سیل خاک سے باہر

    کسے نکلنا نہ تھا کس کو راستہ نہ ملا

    کہیں دکھائی نہ دی انجم دعا کی چمک

    گھنے اندھیرے میں اک ہاتھ بھی اٹھا نہ ملا

    بھٹک رہا ہوں میں اس دشت سنگ میں کب سے

    ابھی تلک تو در آئینہ کھلا نہ ملا

    جلائے پھرتا رہا مشعل تجسس میں

    مگر سراغ کہیں کھوئی شام کا نہ ملا

    اگلتا ہوگا کبھی سونا چاندی خطۂ دل

    مجھے تو ایک بھی سکہ یہاں پڑا نہ ملا

    نواح جاں میں وہ طوفان حبس تھا کہ حسنؔ

    ہوا تو کیا کہ کہیں ہوا نہ ملا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY