سمٹ گئی تو شبنم پھول ستارہ تھی

عذرا پروین

سمٹ گئی تو شبنم پھول ستارہ تھی

عذرا پروین

MORE BYعذرا پروین

    سمٹ گئی تو شبنم پھول ستارہ تھی

    بپھر کے میری لہر لہر انگارہ تھی

    کل تری خواہش کب اتنی بنجاری تھی

    تو سرتاپا آنکھ تھا میں نظارہ تھی

    میں کہ جنوں کے پروں پہ اڑتی خوشبو تھی

    رنگ رنگ کے آکار میں ڈھلتا پارہ تھی

    میں دھرتی ہوں اسے یہی بس یاد رہا

    بھول گیا میں اور بھی اک سیارہ تھی

    تو ہی تو اذن تھا تو ہی انجام ہوا

    ترا بچھڑنا اور میں پارہ پارہ تھی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے