ستارے کا راز رکھ لیا مہمان میں نے

جمال احسانی

ستارے کا راز رکھ لیا مہمان میں نے

جمال احسانی

MORE BYجمال احسانی

    ستارے کا راز رکھ لیا مہمان میں نے

    اک اجلے خواب اور آنکھ کے درمیان میں نے

    چڑھا ہے جب چاند آسماں پر تو بوجھ اترا

    سنا دی ہر سونے والے کو داستان میں نے

    تمام تیشہ بدست حیرت میں گم ہوئے ہیں

    چراغ سے کاٹ دی ہوا کی چٹان میں نے

    میں دھوپ میں کیوں کسی کا احسان مند ہوتا

    خود اپنے سائے کو کر لیا سائبان میں نے

    جمالؔ ہر شہر سے ہے پیارا وہ شہر مجھ کو

    جہاں سے دیکھا تھا پہلی بار آسمان میں نے

    مآخذ
    • کتاب : Saweera (magazine-56 (Pg. 161)
    • Author : Salahuddin Mahmood
    • مطبع : Saweera art Press, Pakistan (1979)
    • اشاعت : 1979

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY