سونے کے دل مٹی کے گھر پیچھے چھوڑ آئے ہیں

سعید قیس

سونے کے دل مٹی کے گھر پیچھے چھوڑ آئے ہیں

سعید قیس

MORE BYسعید قیس

    سونے کے دل مٹی کے گھر پیچھے چھوڑ آئے ہیں

    وہ گلیاں وہ شہر کے منظر پیچھے چھوڑ آئے ہیں

    اپنے آئینوں کو ہم نے روگ لگا رکھا ہے

    کیا کیا چہرے ہم شیشہ گر پیچھے چھوڑ آئے ہیں

    تم اپنے دریا کا رونا رونے آ جاتے ہو

    ہم تو اپنے سات سمندر پیچھے چھوڑ آئے ہیں

    دیکھو ہم نے اپنی جانوں پر کیا ظلم کیا ہے

    پھول سا چہرہ چاند سا پیکر پیچھے چھوڑ آئے ہیں

    ہم بھی کیا پاگل تھے اپنے پیار کی ساری پونجی

    اس کی اک اک یاد بچا کر پیچھے چھوڑ آئے ہیں

    منزل سے اب دور نکل آئے ہیں قیسؔ تو خوش ہیں

    ہمسائے کے کتے کا ڈر پیچھے چھوڑ آئے ہیں

    مأخذ :
    • کتاب : Aks Padta Hai Chaand ka (Pg. 79)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے