سخن میں رنگ تمہارے خیال ہی کے تو ہیں

عرفان صدیقی

سخن میں رنگ تمہارے خیال ہی کے تو ہیں

عرفان صدیقی

MORE BYعرفان صدیقی

    سخن میں رنگ تمہارے خیال ہی کے تو ہیں

    یہ سب کرشمے ہوائے وصال ہی کے تو ہیں

    کہا تھا تم نے کہ لاتا ہے کون عشق کی تاب

    سو ہم جواب تمہارے سوال ہی کے تو ہیں

    ذرا سی بات ہے دل میں اگر بیاں ہو جائے

    تمام مسئلے اظہار حال ہی کے تو ہیں

    یہاں بھی اس کے سوا اور کیا نصیب ہمیں

    ختن میں رہ کے بھی چشم غزال ہی کے تو ہیں

    جسارت سخن شاعراں سے ڈرنا کیا

    غریب مشغلۂ قیل و قال ہی کے تو ہیں

    ہوا کی زد پہ ہمارا سفر ہے کتنی دیر

    چراغ ہم کسی شام زوال ہی کے تو ہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY