سکون قلب و شکیب نظر کی بات کرو

صوفی تبسم

سکون قلب و شکیب نظر کی بات کرو

صوفی تبسم

MORE BYصوفی تبسم

    سکون قلب و شکیب نظر کی بات کرو

    گزر گئی ہے شب غم سحر کی بات کرو

    دلوں کا ذکر ہی کیا ہے ملیں ملیں نہ ملیں

    نظر ملاؤ نظر سے نظر کی بات کرو

    شگفتہ ہو نہ سکے گی فضائے ارض و سما

    کسی کی جلوہ گہ بام و در کی بات کرو

    حریم ناز کی خلوت میں دسترس ہے کسے

    نظارہ ہائے‌ سر رہ گزر کی بات کرو

    بدل نہ جائے کہیں التفات حسن کا رنگ

    حلاوت نگہ مختصر کی بات کرو

    جہان ہوش و خرد کے معاملے ہیں دراز

    کسی کے گیسوئے آشفتہ سر کی بات کرو

    نگاہ ناز ہے اک کائنات راز و نیاز

    جدھر کرے وہ اشارہ ادھر کی بات کرو

    سرور زیست ہوا جس کے دم قدم سے نصیب

    اسی ندیم اسی ہم سفر کی بات کرو

    وہ جس سے تلخیٔ زہراب غم گوارا ہے

    اسی تبسمؔ شیریں اثر کی بات کرو

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    صوفی تبسم

    صوفی تبسم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY