سنا ہے زخمی تیغ نگہ کا دم نکلتا ہے

حیرت الہ آبادی

سنا ہے زخمی تیغ نگہ کا دم نکلتا ہے

حیرت الہ آبادی

MORE BYحیرت الہ آبادی

    سنا ہے زخمی تیغ نگہ کا دم نکلتا ہے

    ترا ارمان لے اے قاتل عالم نکلتا ہے

    نہ آنکھوں میں مروت ہے نہ جائے رحم ہے دل میں

    جہاں میں بے وفا معشوق تم سا کم نکلتا ہے

    کہا عاشق سے واقف ہو تو فرمایا نہیں واقف

    مگر ہاں اس طرف سے ایک نامحرم نکلتا ہے

    محبت اٹھ گئی سارے زمانے سے مگر اب تک

    ہمارے دوستوں میں باوفا اک غم نکلتا ہے

    پتا قاصد یہ رکھنا یاد اس قاتل کے کوچے سے

    کوئی نالاں کوئی بسمل کوئی بے دم نکلتا ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق,

    نعمان شوق

    سنا ہے زخمی تیغ نگہ کا دم نکلتا ہے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY