تازہ ہے اس کی مہک رات کی رانی کی طرح

زیب غوری

تازہ ہے اس کی مہک رات کی رانی کی طرح

زیب غوری

MORE BYزیب غوری

    تازہ ہے اس کی مہک رات کی رانی کی طرح

    کسی بچھڑے ہوئے لمحے کی نشانی کی طرح

    جتنا دیکھو اسے تھکتی نہیں آنکھیں ورنہ

    ختم ہو جاتا ہے ہر حسن کہانی کی طرح

    ریگ صحرا کا عجب رنگ ہواؤں نے کیا

    نقش سا کھنچ گیا دریا کی روانی کی طرح

    یوں گزرتا ہے وہ کترا کے نواح دل سے

    جیسے یہ خاک کا خطہ بھی ہو پانی کی طرح

    مجھ سے کیا کچھ نہ صبا کہہ کے گئی ہے اے زیبؔ

    چند ہی لفظوں میں پیغام زبانی کی طرح

    مآخذ
    • کتاب : zartaab (Pg. 214)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY