تجھ کو آواز سے سمجھوں کہ بیاں سے دیکھوں

محمد اسد اللہ

تجھ کو آواز سے سمجھوں کہ بیاں سے دیکھوں

محمد اسد اللہ

MORE BYمحمد اسد اللہ

    تجھ کو آواز سے سمجھوں کہ بیاں سے دیکھوں

    معتبر کیا ہے بتا تجھ کو کہاں سے دیکھوں

    آب دیدہ ہوں میں خود زخم جگر سے اپنے

    تیری آنکھوں میں چھپا درد کہاں سے دیکھوں

    اس کھلی آنکھ پہ کھلتے نہیں اسرار ترے

    تو چھپا ہے تو تجھے چشم نہاں سے دیکھوں

    میں نے چاہا تھا صنم بن کے تو آنکھوں میں رہے

    تو نے چاہا میں تجھے چشم بتاں سے دیکھوں

    ہر طرف تیر برستے ہیں نشانہ میں ہوں

    لوٹ آتی ہے نظر خود پہ جہاں سے دیکھوں

    اس طرح دل میں اتر جا نہ رہے کچھ باقی

    تو ہی تو ہو میری نظروں میں جہاں سے دیکھوں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY