تمہاری بزم میں جس بات کا بھی چرچا تھا

ابرار اعظمی

تمہاری بزم میں جس بات کا بھی چرچا تھا

ابرار اعظمی

MORE BY ابرار اعظمی

    تمہاری بزم میں جس بات کا بھی چرچا تھا

    مجھے یقین ہے اس میں نہ ذکر میرا تھا

    نہ سرد آہیں نہ شکوے نہ ذکر درد فراق

    ہمارے عشق کا انداز ہی نرالا تھا

    کل آ گیا تھا سوا نیزے پر مرا سورج

    میں جل رہا تھا مگر ہر طرف اندھیرا تھا

    تھا چہرہ یخ زدہ جذبات کی حسیں تصویر

    بدن کشش کا مرقع سراب آسا تھا

    مجھے بھی فرصت نظارۂ جمال نہ تھی

    اور اس کو پاس کسی اور کے بھی جانا تھا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY