تو بھی وہاں نہیں محبت جہاں نہیں

جگدیش سہائے سکسینہ

تو بھی وہاں نہیں محبت جہاں نہیں

جگدیش سہائے سکسینہ

MORE BYجگدیش سہائے سکسینہ

    تو بھی وہاں نہیں محبت جہاں نہیں

    ہر آستان حسن ترا آستاں نہیں

    الفت کی تھیں دلیل تری بدگمانیاں

    اب بد گمان میں ہوں کہ تو بدگماں نہیں

    دل کش ہے گلستاں بھی ترے حسن کی طرح

    لیکن تری ادا کی طرح دل ستاں نہیں

    نعمت ملی ہے تم کو جوانی کی دوستو

    افسوس ہے کہ عزم تمہارا جواں نہیں

    کیونکر کہوں کہ لوگ ہیں سوئے عدم رواں

    اس کارواں میں گرد پس کارواں نہیں

    ہے بے نیاز شادی و غم میری بے خودی

    یہ وہ چمن ہے جس میں بہار و خزاں نہیں

    نادم مرا سکوت کہ ہے قلب سوگوار

    دنیا سمجھ رہی ہے خموشی فغاں نہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY