انہیں یہ فکر ہے ہر دم نئی طرز جفا کیا ہے

چکبست برج نرائن

انہیں یہ فکر ہے ہر دم نئی طرز جفا کیا ہے

چکبست برج نرائن

MORE BYچکبست برج نرائن

    انہیں یہ فکر ہے ہر دم نئی طرز جفا کیا ہے

    ہمیں یہ شوق ہے دیکھیں ستم کی انتہا کیا ہے

    گنہگاروں میں شامل ہیں گناہوں سے نہیں واقف

    سزا کو جانتے ہیں ہم خدا جانے خطا کیا ہے

    یہ رنگ بیکسی رنگ جنوں بن جائے گا غافل

    سمجھ لے یاس و حرماں کے مرض کی انتہا کیا ہے

    نیا بسمل ہوں میں واقف نہیں رسم شہادت سے

    بتا دے تو ہی اے ظالم تڑپنے کی ادا کیا ہے

    چمکتا ہے شہیدوں کا لہو پردے میں قدرت کے

    شفق کا حسن کیا ہے شوخئ رنگ حنا کیا ہے

    امیدیں مل گئیں مٹی میں دور ضبط آخر ہے

    صدائے غیب بتلا دے ہمیں حکم خدا کیا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY