زمیں روئی ہمارے حال پر اور آسماں رویا

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

زمیں روئی ہمارے حال پر اور آسماں رویا

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

MORE BY وحشتؔ رضا علی کلکتوی

    زمیں روئی ہمارے حال پر اور آسماں رویا

    ہماری بیکسی کو دیکھ کر سارا جہاں رویا

    میں جب نکلا چمن سے شبنم آب گلستاں رویا

    اداسی چھا گئی ایسی خود آخر باغباں رویا

    نہ آیا رحم کچھ بھی آہ دل میں اس ستم گر کے

    ہماری جبہہ سائی کے اثر سے آستاں رویا

    ہر اک عضو بدن ماتم کناں ہے دل کے جانے سے

    ہوا یوسف جو گم تو کارواں کا کارواں رویا

    خلل افگن تری بزم طرب میں کون ہو ظالم

    ہوا کیا گر ترے کوچے میں کوئی تفتۂ جاں رویا

    مرے آنسو تری بیداد کا پردہ نہ کھولیں گے

    عبث یہ بدگمانی ہے میں کب رویا کہاں رویا

    عدو خوش ہوں تو ہوں اے بے مروت تیری محفل میں

    مرا تو حال یہ ہے جب کبھی آیا یہاں رویا

    جفائے دشمناں اور بے وفائی ہائے یاراں سے

    بہت غم دیدہ ہو کر وحشتؔ آزردہ جاں رویا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY