ضمیر خاک شہہ دو سرا میں روشن ہے

ابو الحسنات حقی

ضمیر خاک شہہ دو سرا میں روشن ہے

ابو الحسنات حقی

MORE BY ابو الحسنات حقی

    ضمیر خاک شہہ دو سرا میں روشن ہے

    مرا خدا مرے حرف دعا میں روشن ہے

    وہ آندھیاں تھیں کہ میں کب کا بجھ گیا ہوتا

    چراغ ذات بھی حمد و ثنا میں روشن ہے

    میں اپنی ماں کے وسیلے سے زندہ تر ٹھہروں

    کہ وہ لہو مرے صبر و رضا میں روشن ہے

    میں بڑھ رہا ہوں ادھر یا وہ آ رہا ہے ادھر

    وہی خوشی وہی خوشبو ہوا میں روشن ہے

    کہیں بھی جاؤں ستارہ سا ساتھ رہتا ہے

    وہ شب چراغ جو اس کی ہوا میں روشن ہے

    مآخذ:

    • کتاب : Imkaan-e-roz-o-shab (Pg. 86)
    • Author : Syed Abul Hasnat Haqqi
    • مطبع : Educational Publishing House (2011)
    • اشاعت : 2011

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY