asbat-o-nafi

शम्सुर रहमान फ़ारूक़ी

मकतबा जामिया लिमिटेड, नई दिल्ली
1986 | अन्य

पुस्तक: परिचय

परिचय

کیا کسی نقاد کی اہمیت کی ایک وجہ یہ بھی ہوسکتی ہے کہ اس سے اتفاق اور اختلاف کرنے والے لوگ اس کے ہم عصرون سے زیادہ ہوں ۔اگر ہان تو فاروقی اردو کے وہ واحد نقاد ہیں جن سے اختلاف و اتفاق کرنے والے آج بھی اسی مقدار میں موجود ہیں جتنے ان کی تحریروں کے لکھے جانےکے وقت تھے ۔ شمس الرحمن فاروقی کی تحریروں کی سب سے زیادہ نمایاں صفت جدید تر مباحث کا حامل ہونا ہے ان کی ہر تحریر کچھ پرانی لکیروں کو کاٹتی ہے اور کچھ نئی لکیریں کھینچتی ہے۔آپ ان سے اختلاف یا اتفاق کرسکتے ہیں لیکن ان کے پیچھے موجود ایک گہری فکرکے تسلسل اور سخت تنقیدی ریاضت کو تسلیم کرنا ہی پڑتا ہے ۔فاروقی کے یہاں تنقید باضابطہ اپنے ایک علمی ڈسپلن کے ساتھ آئ ہے ۔ان کی تحریروں کا خاص منطقی ،وضاحتی اور استدلالی انداز اردو تنقید کی پوری روایت میں ہمیں چونکاتا ضرور ہے ۔یہ کریڈٹ بھی فاروقی کو ہی جاتا ہے کہ اردو تنقید میں بہت سے نئے نظریاتی مباحث کا آغاز ان کی تحریروں سے ہوا ہے ۔شاعری،شعر فہمی ،شعر اور نثر کے مابین فرق،افسانہ،اس کی فنی تشکیل اوراس کی قرآت کے مسائل کے سیاق میں جو بنیادی سوالات ان کی تحریرں نے قائم کئے ہیں وہ آج بھی اردو تنقید کا حوالہ ہیں۔اثبات ونفی میں اقبال پر تین اچھے مضامیں ہیں ۔فاروقی نے اقبال کو ان کے فنی اور تخلیقی سیاق میں پڑھنے اور سمجھنے کی کوشش کی ہے اقبال تنقید میں یہ مضامین بہت بنیادی نوعیت کے ہی۔ شمس الرحمان فاروقی کی اور بھی کتابیں ریختہ پر موجود ہیں ۔آپ پڑھئے اور اپنے خیالات کا اظہار کیجئے ۔

.....और पढ़िए

लेखक की अन्य पुस्तकें

पूरा देखिए

लोकप्रिय और ट्रेंडिंग

पूरा देखिए

पुस्तकों की तलाश निम्नलिखित के अनुसार

पुस्तकें विषयानुसार

शायरी की पुस्तकें

पत्रिकाएँ

पुस्तक सूची

लेखकों की सूची

विश्वविद्यालय उर्दू पाठ्यक्रम