bustan-e-hikmat

गोया फ़क़ीर मोहम्मद

मतबा जौहर-ए-हिन्द,दिल्ली
1891 | अन्य

पुस्तक: परिचय

परिचय

زیر نظر کتاب 'بستان حکمت" در اصل ملا حسین واعظ کاشفی کی انوار سہیلی کا اردو ترجمہ ہے۔ جس کو فقیر محمد خان گویا نے انجام دیا ہے۔ گلستان سعدی کے بعد سب سے زیادہ مقبولیت والی کتاب یہی انوار سہیلی ہے، جو سنسکرت کی مشہور کتاب پنچ تنتر کا فارسی جامہ ہے جس میں کہانیوں، داستانوں اور روایتوں کو بیان کیا گیا ہے۔ ان کہانیوں میں جانور، پرندے اور کیڑے مکوڑے سب انسانوں کی طرح کام انجام دیتے ہیں اور ان کے ہی مانند گفتگو کرتے ہیں۔ فقیر محمد گویا کے اس ترجمے کی اہمیت اس لئے بھی مزید ہوجاتی ہے کیونکہ لکھنو میں انیسویں صدی کے نصف اول میں سوائے فسانہ عجائب کے کوئی دوسرا بڑا نثری کارنامہ یہی ترجمہ ہے جس میں تخلیقی جوہر دکھائے گئے ہیں۔

.....और पढ़िए

लेखक: परिचय

गोया फ़क़ीर मोहम्मद

गोया फ़क़ीर मोहम्मद

گویا۔ نواب حسام الدولہ تہور جنگ فقیر محمدؐ خاں گویاؔ مشہور شاعر جوش ملیح آبادی کے جد امجد لکھنؤ کے رہنے والے ۔عربی و فارسی کے جید عالم اور مشہور شاعر تھے ۔نواب اودھ کی سرکار میں رسالداری اور نظامت کے اعلیٰ عہدوں پر فائز رہے ۔دو ہزار روپیہ ماہوار تنخواہ پاتے تھے ۔فرائض ملازمت کے علاوہ نہایت علم دوست اور خوش طبع بزرگ تھے ۔اہل علم اور شعرا کا ہر وقت ان کے ہاں جمگھٹا لگا رہتا تھا ۔ان کا کلام دیوان گویا کے نام سے چھپ چکا ہے ۔مشہور عالم فارسی کتاب اور سہیلی کا سب سے پہلے انہوں نے ہی 1836میں ترجمہ کیا اور دبستان  حکمت نام رکھا۔1850 میں انتقال کیا۔

.....और पढ़िए

लेखक की अन्य पुस्तकें

पूरा देखिए

लोकप्रिय और ट्रेंडिंग

पूरा देखिए

पुस्तकों की तलाश निम्नलिखित के अनुसार

पुस्तकें विषयानुसार

शायरी की पुस्तकें

पत्रिकाएँ

पुस्तक सूची

लेखकों की सूची

विश्वविद्यालय उर्दू पाठ्यक्रम