ऊद-ए-हिन्दी

मिर्ज़ा ग़ालिब

मज्लिस-ए-तरक़्क़ी-ए-अदब, लाहौर
1967 | अन्य

पुस्तक: परिचय

परिचय

میرزا اسد اللہ خاں غالب کا نام اردو ادب میں اور خاص کر شاعری میں کسی تعارف کا محتاج نہیں۔ شاعری کے علاوہ ان کی شناخت ان کی مکتوب نگاری بھی ہے اردو میں مکتوب نگاری کو غالب نے ایک نیا اسلوب دیا۔ انہوں نے خطوط کو زندگی کی حرارت بخشی ۔ سادہ اور عام فہم زبان کا استعمال کیا جس میں بے تکلف عبارتیں ہوتیں ، مسجع و مرصع عبارتوں سے پاک ۔ غالب خط نہیں لکھتے تھے بلکہ بات چیت کرتے تھے ۔ گرچہ یہ مکالمہ یک طرفہ ہوتا تھا لیکن مکتوب الیہ کو ایسا محسوس ہوتا تھا گویا غالب ان کے سامنے ان سے گفتگو کر رہے ہیں۔ غالب کے خطوط معلومات کا گنجینہ ہیں ۔ ان سے اس دور کی سیاسی سماجی زندگی پر روشنی پڑتی ہے ۔ خاص طور ایام غدر اور اس کے بعد کے چشم دید حالات اس خطوط میں بیان ہوئے ہیں ۔ بہت سے خطوط شاگردوں کے نام ہیں جن میں ان کے کلام پر اصلاح دینے کے ساتھ زبان و بیان کے نکات بتائے گئے ہیں۔ غالب کے خطوط کے دو مجموعے "عود ہندی" اور "اردوئے معلیٰ" کے نام سے شائع ہو کر مقبول عام ہو چکے ہیں۔ زیر نظر مجموعہ "عود ہندی" غالب کا پہلا مجموعہ ہے جو ۱۹۶۸ آپ کی وفات سے چار ماہ قبل شائع ہوا۔ اس مجموعہ میں تقریبا ۱۷۳ خطوط شامل کیے گئے ہیں جو مختلف اوقات میں مختلف لوگوں کو لکھے گئے تھے۔ اس نسخہ میں مرتب نے حاشیہ و تعلیقات کا بھی خیال رکھا ہے، اس لئے اس نسخہ کی اہمیت مزید ہوجاتی ہے۔

.....और पढ़िए

लेखक की अन्य पुस्तकें

पूरा देखिए

लोकप्रिय और ट्रेंडिंग

पूरा देखिए

पुस्तकों की तलाश निम्नलिखित के अनुसार

पुस्तकें विषयानुसार

शायरी की पुस्तकें

पत्रिकाएँ

पुस्तक सूची

लेखकों की सूची

विश्वविद्यालय उर्दू पाठ्यक्रम