مصنف : کلیم عاجز

ناشر : صغیرالدین

سن اشاعت : 1992

زبان : Urdu

موضوعات : خود نوشت

صفحات : 429

معاون : کلیم عاجز

ابھی سن لو مجھ سے

کتاب: تعارف

کلیم عاجز کی شاعرانہ حیثیت مسلم ہے. اپنے منفرد لب و لہجہ کی وجہ سے جدید غزل گو شعرا میں اپنے لیے اعلیٰ مقام پیدا کیا ۔ یہ ان کی خودنوشت ہے جس میں وہ اپنی زندگی کی در بھر ی کہانیوں کو بیان کر تے چلے جاتے ہیں ۔دیباچہ میں انہوں نے اپنی زندگی کے ساتھ ساتھ ادب کی تخلیق پر بھی بات کی ہے جہاں وہ کہتے ہیں کہ اب ہیر ے کی محدود دنیا سے نکال کر کوئلے کی وسیع دنیا میں ڈال کر بتایا گیا کہ یہی آزاد ی ہے ۔ مقدمہ میں کئی مقام پر شعر و نثر کا ذکر کرتے ہوئے شکوہ کرتے ہیں کہ اب کچھ نہیں باقی سب کچھ اگلوں کے ساتھ چلا گیا ہے ۔دیبا چہ کے بعد پٹنہ کی زندگی کا بیان کر تے ہیں۔ نئی گفتگو نئے صفحہ سے شروع ہوتی ہے لیکن کہیں پر بھی عنوان نہیں ملتا ہے ۔ اپنے گاؤں کا ذکر بہت ہی تفصیل سے کیا ہے اور مرکزی موضوع بھی گاؤں اور وہاں کے افراد ہیں ۔انہوں نے چھوٹے سے چھوٹے فرد کے لیے بہت ہی خلوص سے قلم کو جنبش دیا ہے ۔ سوانح اور اسلوب نگارش دونوں حیثیت سے کتاب مطالعہ کی طرف دعوت دیتی ہے ۔

.....مزید پڑھئے

مصنف: تعارف

کلیم الدین احمد، قلمی نام ’’کلیم عاجز‘‘ شاعری کی دنیا میں ایک بڑا نام شمار کیا جاتاہے۔ ان کی پہچان بحیثیت شاعر ہی نہیں ایک مفکر اور ماہر تعلیم کے طور پر بھی ہوئی۔ پٹنہ سے متصل ضلع نالندہ جو قدیم بہار میں بدھشٹوں کا مامن و مسکن رہا، وہیں کے ایک گاؤں تلہرا میں ان کی پیدائش 1920 میں ہوئی۔ پٹنہ یونیورسٹی سے گریجویشن میں گولڈ میڈل حاصل کیا اور ایم ے اردو کی ڈگری حاصل کرنے کے بعد وہیں سے ڈاکٹریٹ کی امتیازی ڈگری سے بھی سرفراز ہوئے۔ ان کے مقالے کا عنوان ’’بہار میں اردو ادب کا ارتقا‘‘ تھا، ان کی متعدد تصانیف اور شعری مجموعوں کے علاوہ وہ مقالہ بھی اب کتابی شکل میں موجود ہے۔ ڈاکٹریٹ کے بعد پٹنہ یونیورسٹی ہی میں بحیثیت استاد منتخب ہوئے۔ محض 17 سال کی عمر سے شاعری کرنے لگے اور شاعری کی دنیا میں انہیں میر ثانی کے طور پر جانا گیا۔ ان کی غزلوں کا پہلا مجموعہ کلام 1976 میں سامنے آیا جس کا اجرا نئی دہلی کے وگیان بھون میں صدر جمہوریہ ڈاکٹر فخرالدین علی احمد کے ہاتھوں عمل میں آیا۔ غزلیہ اور نظمیہ دونوں ہی صنفوں میں انہیں کمال حاصل رہا، ان کا مجموعہ کلام ’’وہ جو شاعری کا سبب ہوا‘‘ 1975 میں شائع ہوا، ’’جب فصل بہاراں آئی تھی‘‘ 1990 میں، ’’ابھی سن لو مجھ سے‘‘ 1992 میں اور ’’کوچہ جاناں جاناں‘‘ 2002  میں شائع ہوا۔ 60-70 کی دہائی میں یوم جمہوریہ کے موقع پر لال قلع دہلی میں منعقد ہونے والے مشاعرہ میں بہار کی نمائندگی کے لئے انہیں ہر سال مدعو کیا جاتارہا۔ سبکدوشی کے بعد اردو ایڈوائزری کمیٹی آف بہار کے چیئرمین رہے۔

کلیم عاجز نثر نگاری پر بھی خاصہ دسترس رکھتے تھے۔ ’’مجلس ادب‘‘ تنقیدی مضامین پر مبنی کتاب کے علاوہ تحقیقی مقالوں کا مجموعہ ’’دفتر گم گشتہ‘‘ ایک سفر نامہ جو سفر حج کے بعد انہوں نے ’’یہاں سے کعبہ کعبہ سے مدینہ‘‘ 1981 میں تحریر کیا، دوسرا سفر نامہ امریکہ ’’ایک دیش ایک بدیسی‘‘ بالترتیب 1978 اور 1979میں شائع ہوا۔ غزلوں، نظموں اور رباعیات پر مبنی ایک کتاب جسے ڈاکٹر وسیم احمد نے مرتب کیا ہے، 2008 میں منظر عام آیا۔ پدم سری کے علاوہ متعدد اعزازات سے سرفراز ہوئے، ان کی وفات 14 فروری 2015  میں ہوئی۔ جنازے کی نماز پٹنہ کے گاندھی میں ہوئی اور آبائی وطن تلہرا میں مدفون ہوئے۔

.....مزید پڑھئے

مصنف کی مزید کتابیں

مصنف کی دیگر کتابیں یہاں پڑھئے۔

مزید

قارئین کی پسند

اگر آپ دوسرے قارئین کی دلچسپیوں میں تجسس رکھتے ہیں، تو ریختہ کے قارئین کی پسندیدہ

مزید

مقبول و معروف

مقبول و معروف اور مروج کتابیں یہاں تلاش کریں

مزید
بولیے