اب وہ کرم کریں کہ ستم میں نشے میں ہوں

ساحر لدھیانوی

اب وہ کرم کریں کہ ستم میں نشے میں ہوں

ساحر لدھیانوی

MORE BYساحر لدھیانوی

    اب وہ کرم کریں کہ ستم میں نشے میں ہوں

    مجھ کو نہ کوئی ہوش نہ غم میں نشے میں ہوں

    سینے سے بوجھ ان کے غموں کا اتار کے

    آیا ہوں آج اپنی جوانی کو ہار کے

    کہتے ہیں ڈگمگاتے قدم میں نشے میں ہوں

    وہ بے وفا ہے اب بھی یہ دل مانتا نہیں

    کمبخت نا سمجھ ہے انہیں جانتا نہیں

    میں آج توڑ دوں گا بھرم میں نشے میں ہوں

    فرصت نہیں ہے رونے رلانے کے واسطے

    آئے نہ ان کی یاد ستانے کے واسطے

    اس وقت دل میں درد ہے کم میں نشے میں ہوں

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Sahir Ludhianvi (Pg. 445)
    • Author : SAHIR LUDHIANVI
    • مطبع : Farid Book Depot (Pvt.) Ltd

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے