جانے وہ کیسے لوگ تھے جن کو پیار سے پیار ملا

ساحر لدھیانوی

جانے وہ کیسے لوگ تھے جن کو پیار سے پیار ملا

ساحر لدھیانوی

MORE BYساحر لدھیانوی

    جانے وہ کیسے لوگ تھے جن کو پیار سے پیار ملا

    ہم نے تو جب کلیاں مانگیں کانٹوں کا ہار ملا

    خوشیوں کی منزل ڈھونڈی تو غم کی گرد ملی

    چاہت کے نغمے چاہے تو آہ سرد ملی

    دل کے بوجھ کو دونا کر گیا جو غم خوار ملا

    بچھڑ گیا ہر ساتھی دے کر پل دو پل کا ساتھ

    کس کو فرصت ہے جو تھامے دیوانوں کا ہاتھ

    ہم کو اپنا سایہ تک اکثر بیزار ملا

    اس کو ہی جینا کہتے ہیں تو یوں ہی جی لیں گے

    اف نہ کریں گے لب سی لیں گے آنسو پی لیں گے

    غم سے اب گھبرانا کیسا غم سو بار ملا

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Sahir Ludhianvi (Pg. 430)
    • Author : SAHIR LUDHIANVI
    • مطبع : Farid Book Depot (Pvt.) Ltd

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY