اب تو گھبرا کے یہ کہتے ہیں کہ مر جائیں گے

شیخ ابراہیم ذوقؔ

اب تو گھبرا کے یہ کہتے ہیں کہ مر جائیں گے

شیخ ابراہیم ذوقؔ

MORE BY شیخ ابراہیم ذوقؔ

    اب تو گھبرا کے یہ کہتے ہیں کہ مر جائیں گے

    مر کے بھی چین نہ پایا تو کدھر جائیں گے

    being agitated I express the hope to die, although

    in death, if solace is not found, then where shall I go?

    تم نے ٹھہرائی اگر غیر کے گھر جانے کی

    تو ارادے یہاں کچھ اور ٹھہر جائیں گے

    if you are thus resolved to go to my rival's house

    my cause with greater ardor for sure I will espouse

    خالی اے چارہ گرو ہوں گے بہت مرہم داں

    پر مرے زخم نہیں ایسے کہ بھر جائیں گے

    O healers, all your potions, balms, may now be at an end

    but still my wounds are not the sort that one can ever mend

    پہنچیں گے رہ گزر یار تلک کیوں کر ہم

    پہلے جب تک نہ دو عالم سے گزر جائیں گے

    the path to my beloved's street how can I ever find

    Untll I traverse the course of both the worlds combined

    شعلۂ آہ کو بجلی کی طرح چمکاؤں

    پر مجھے ڈر ہے کہ وہ دیکھ کے ڈر جائیں گے

    like lightning I would brighten the flame that is my sigh

    but then I am afraid that she, in fear would start to cry

    ہم نہیں وہ جو کریں خون کا دعویٰ تجھ پر

    بلکہ پوچھے گا خدا بھی تو مکر جائیں گے

    I am not one of those who will you of murder accuse

    even if God would seek to know, I'd blatantly refuse

    آگ دوزخ کی بھی ہو جائے گی پانی پانی

    جب یہ عاصی عرق شرم سے تر جائیں گے

    even the blazing, roaring flames of hell will then be quenched

    when these offenders there arrive in sweat of shame all drenched

    نہیں پائے گا نشاں کوئی ہمارا ہرگز

    ہم جہاں سے روش تیر نظر جائیں گے

    none will ever find the slightest trace of me perchance

    I will leave this world just like the arrow of a glance

    سامنے چشم گہر بار کے کہہ دو دریا

    چڑھ کے گر آئے تو نظروں سے اتر جائیں گے

    zauq, by madrasas misled mullahs have gone astray

    bring them to the tavern and they will find their way

    لائے جو مست ہیں تربت پہ گلابی آنکھیں

    اور اگر کچھ نہیں دو پھول تو دھر جائیں گے

    رخ روشن سے نقاب اپنے الٹ دیکھو تم

    مہر و ماہ نظروں سے یاروں کی اتر جائیں گے

    ہم بھی دیکھیں گے کوئی اہل نظر ہے کہ نہیں

    یاں سے جب ہم روش تیر نظر جائیں گے

    ذوقؔ جو مدرسے کے بگڑے ہوئے ہیں ملا

    ان کو مے خانے میں لے آؤ سنور جائیں گے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    سدیپ بنرجی

    سدیپ بنرجی

    ٹینا ثانی

    ٹینا ثانی

    جگجیت سنگھ

    جگجیت سنگھ

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    اب تو گھبرا کے یہ کہتے ہیں کہ مر جائیں گے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites