دل میں اک لہر سی اٹھی ہے ابھی

ناصر کاظمی

دل میں اک لہر سی اٹھی ہے ابھی

ناصر کاظمی

MORE BY ناصر کاظمی

    دل میں اک لہر سی اٹھی ہے ابھی

    کوئی تازہ ہوا چلی ہے ابھی

    کچھ تو نازک مزاج ہیں ہم بھی

    اور یہ چوٹ بھی نئی ہے ابھی

    شور برپا ہے خانۂ دل میں

    کوئی دیوار سی گری ہے ابھی

    بھری دنیا میں جی نہیں لگتا

    جانے کس چیز کی کمی ہے ابھی

    تو شریک سخن نہیں ہے تو کیا

    ہم سخن تیری خامشی ہے ابھی

    یاد کے بے نشاں جزیروں سے

    تیری آواز آ رہی ہے ابھی

    شہر کی بے چراغ گلیوں میں

    زندگی تجھ کو ڈھونڈتی ہے ابھی

    سو گئے لوگ اس حویلی کے

    ایک کھڑکی مگر کھلی ہے ابھی

    تم تو یارو ابھی سے اٹھ بیٹھے

    شہر میں رات جاگتی ہے ابھی

    وقت اچھا بھی آئے گا ناصرؔ

    غم نہ کر زندگی پڑی ہے ابھی

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    عابد علی بیگ

    عابد علی بیگ

    تصور خانم

    تصور خانم

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    دل میں اک لہر سی اٹھی ہے ابھی نعمان شوق

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites