خبر تحیر عشق سن نہ جنوں رہا نہ پری رہی

سراج اورنگ آبادی

خبر تحیر عشق سن نہ جنوں رہا نہ پری رہی

سراج اورنگ آبادی

MORE BY سراج اورنگ آبادی

    خبر تحیر عشق سن نہ جنوں رہا نہ پری رہی

    نہ تو تو رہا نہ تو میں رہا جو رہی سو بے خبری رہی

    شہ بے خودی نے عطا کیا مجھے اب لباس برہنگی

    نہ خرد کی بخیہ گری رہی نہ جنوں کی پردہ دری رہی

    کبھی سمت غیب سیں کیا ہوا کہ چمن ظہور کا جل گیا

    مگر ایک شاخ نہال غم جسے دل کہو سو ہری رہی

    نظر تغافل یار کا گلہ کس زباں سیں بیاں کروں

    کہ شراب صد قدح آرزو خم دل میں تھی سو بھری رہی

    وو عجب گھڑی تھی میں جس گھڑی لیا درس نسخۂ عشق کا

    کہ کتاب عقل کی طاق پر جوں دھری تھی تیوں ہی دھری رہی

    ترے جوش حیرت حسن کا اثر اس قدر سیں یہاں ہوا

    کہ نہ آئینہ میں رہی جلا نہ پری کوں جلوہ گری رہی

    کیا خاک آتش عشق نے دل بے نوائے سراجؔ کوں

    نہ خطر رہا نہ حذر رہا مگر ایک بے خطری رہی

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    متفرق

    متفرق

    متفرق

    متفرق

    عابدہ پروین

    عابدہ پروین

    متفرق

    متفرق

    RECITATIONS

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    خبر تحیر عشق سن نہ جنوں رہا نہ پری رہی فصیح اکمل

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites