سر میں سودا بھی نہیں دل میں تمنا بھی نہیں

فراق گورکھپوری

سر میں سودا بھی نہیں دل میں تمنا بھی نہیں

فراق گورکھپوری

MORE BY فراق گورکھپوری

    سر میں سودا بھی نہیں دل میں تمنا بھی نہیں

    لیکن اس ترک محبت کا بھروسا بھی نہیں

    دل کی گنتی نہ یگانوں میں نہ بیگانوں میں

    لیکن اس جلوہ گہہ ناز سے اٹھتا بھی نہیں

    مہربانی کو محبت نہیں کہتے اے دوست

    آہ اب مجھ سے تری رنجش بے جا بھی نہیں

    ایک مدت سے تری یاد بھی آئی نہ ہمیں

    اور ہم بھول گئے ہوں تجھے ایسا بھی نہیں

    آج غفلت بھی ان آنکھوں میں ہے پہلے سے سوا

    آج ہی خاطر بیمار شکیبا بھی نہیں

    بات یہ ہے کہ سکون دل وحشی کا مقام

    کنج زنداں بھی نہیں وسعت صحرا بھی نہیں

    ارے صیاد ہمیں گل ہیں ہمیں بلبل ہیں

    تو نے کچھ آہ سنا بھی نہیں دیکھا بھی نہیں

    آہ یہ مجمع احباب یہ بزم خاموش

    آج محفل میں فراقؔ سخن آرا بھی نہیں

    یہ بھی سچ ہے کہ محبت پہ نہیں میں مجبور

    یہ بھی سچ ہے کہ ترا حسن کچھ ایسا بھی نہیں

    یوں تو ہنگامے اٹھاتے نہیں دیوانۂ عشق

    مگر اے دوست کچھ ایسوں کا ٹھکانا بھی نہیں

    فطرت حسن تو معلوم ہے تجھ کو ہمدم

    چارہ ہی کیا ہے بجز صبر سو ہوتا بھی نہیں

    منہ سے ہم اپنے برا تو نہیں کہتے کہ فراقؔ

    ہے ترا دوست مگر آدمی اچھا بھی نہیں

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    بیگم اختر

    بیگم اختر

    ٹینا ثانی

    ٹینا ثانی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites