کسی کی شام سادگی سحر کا رنگ پا گئی

درشن سنگھ

کسی کی شام سادگی سحر کا رنگ پا گئی

درشن سنگھ

MORE BYدرشن سنگھ

    کسی کی شام سادگی سحر کا رنگ پا گئی

    صبا کے پاؤں تھک گئے مگر بہار آ گئی

    چمن کی جشن گاہ میں اداسیاں بھی کم نہ تھیں

    جلی جو کوئی شمع گل کلی کا دل بجھا گئی

    بتان رنگ رنگ سے بھرے تھے بت کدہ مگر

    تیری ادائے سادگی مری نظر کو بھا گئی

    میری نگاه تشنہ لب کی سر خوشی نہ پوچھئے

    کے جب اٹھی نگاہ ناز پی گئی پلا گئی

    خزاں کا دور ہے مگر وہ اس ادا سے آئے ہیں

    بہار درشنؔ حزیں کی زندگی پہ چھا گئی

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    غلام علی

    غلام علی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY