آنکھوں پہ ابھی تہمت بینائی کہاں ہے

رؤف خیر

آنکھوں پہ ابھی تہمت بینائی کہاں ہے

رؤف خیر

MORE BYرؤف خیر

    آنکھوں پہ ابھی تہمت بینائی کہاں ہے

    تو خود ہی تماشہ ہے تماشائی کہاں ہے

    آئینہ ہوئی تشنگی پایابیٔ جاں سے

    چہرے پہ تو لکھی ہوئی رسوائی کہاں ہے

    ان جاگتی آنکھوں کو ملے دھوپ کے بازار

    اے دل وہ پگھلتی ہوئی تنہائی کہاں ہے

    سورج ہے کہ بس نوک پہ سوئی کی کھڑا ہے

    اب فرصت کم کم بھی مرے بھائی کہاں ہے

    خوں چوستے لمحوں سے کہو ہاتھ پساریں

    احساس کی صورت ابھی زردائی کہاں ہے

    کچھ اور بکھر کر کہیں پہچان نہ کھو لوں

    اس شہر کو مٹی مری راس آئی کہاں ہے

    وہ شخص بڑے چاؤ سے کچھ پوچھ رہا ہے

    تو ایسے میں اے لذت گویائی کہاں ہے

    خیر اپنوں میں اک ہم ہی نکل آئے ہیں شاعر

    شہزادگیٔ شوق یہ آبائی کہاں ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY