آب و گیا سے بے نیاز سرد جبین کوہ پر (ردیف .. ا)

شمس الرحمن فاروقی

آب و گیا سے بے نیاز سرد جبین کوہ پر (ردیف .. ا)

شمس الرحمن فاروقی

MORE BYشمس الرحمن فاروقی

    آب و گیا سے بے نیاز سرد جبین کوہ پر

    گرمی روئے یار کا عکس بھی رائیگاں گیا

    سطح پہ تازہ پھول ہیں کون سمجھ سکا یہ راز

    آگ کدھر کدھر لگی شعلہ کہاں کہاں گیا

    راز خرد ہو کچھ بھی اب راز جنوں تو یہ ہے بس

    آنکھ تھی بے بصر رہی تیر تھا بے کماں گیا

    عمر رواں کی منزلیں طول طویل مختصر

    آپ بھی ہم سفر رہے غیر بھی ہم عناں گیا

    مأخذ :
    • کتاب : Ganj e Sokhta (Pg. 43)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY