آداب عاشقی سے بیگانہ کہہ رہی ہے

شکیل بدایونی

آداب عاشقی سے بیگانہ کہہ رہی ہے

شکیل بدایونی

MORE BYشکیل بدایونی

    آداب عاشقی سے بیگانہ کہہ رہی ہے

    میری نظر مجھی کو دیوانہ کہہ رہی ہے

    ہر آہ سر پیہم دل سے نکل نکل کر

    دل کی تباہیوں کا افسانہ کہہ رہی ہے

    اس درجہ ہے مسلط دیوانگی کا عالم

    دیوانگی بھی مجھ کو دیوانہ کہہ رہی ہے

    یہ انقلاب دوراں یہ عیش و غم کے عنواں

    گویا زبان فطرت افسانہ کہہ رہی ہے

    میری زباں انہیں سے ان کے ستم کا قصہ

    یوں دب کے کہہ رہی ہے گویا نہ کہہ رہی ہے

    اے برق فتنہ ساماں عنوان تازہ کوئی

    یہ کیا سنا سنایا افسانہ کہہ رہی ہے

    ہوں زندہ اک مرقع میں صورت آفریں کا

    دنیا شکیلؔ میرا افسانہ کہہ رہی ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Shakiil Badaayuuni (Pg. 91)
    • Author : Shakiil Badaayuuni
    • مطبع : Farid Book Depot (Pvt.) Ltd

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY