آدمی نور ہے

حفیظ کرناٹکی

آدمی نور ہے

حفیظ کرناٹکی

MORE BYحفیظ کرناٹکی

    آدمی نور ہے

    جلوۂ طور ہے

    رب ہے مختار کل

    بندہ مجبور ہے

    نشۂ حرص میں

    ہر کوئی چور ہے

    صالحوں کے لیے

    وعدۂ حور ہے

    کیا ہے صیہونیت

    ایک ناسور ہے

    مغلیہ سلطنت

    عزم تیمور ہے

    حافظؔ انسان سے

    زندگی دور ہے

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY