آگ ہی کاش لگ گئی ہوتی

بدیع الزماں خاور

آگ ہی کاش لگ گئی ہوتی

بدیع الزماں خاور

MORE BYبدیع الزماں خاور

    آگ ہی کاش لگ گئی ہوتی

    دو گھڑی کو تو روشنی ہوتی

    لوگ ملتے نہ جو نقابوں میں

    کوئی صورت نہ اجنبی ہوتی

    پوچھتے جس سے اپنا نام ایسی

    شہر میں ایک تو گلی ہوتی

    بات کوئی کہاں خوشی کی تھی

    دل کو کس بات کی خوشی ہوتی

    موت جب تیرے اختیار میں ہے

    میرے قابو میں زندگی ہوتی

    مہک اٹھتا نگر نگر خاورؔ

    دل کی خوشبو اگر اڑی ہوتی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY