آغاز ہوا ہے الفت کا اب دیکھیے کیا کیا ہونا ہے

افسر میرٹھی

آغاز ہوا ہے الفت کا اب دیکھیے کیا کیا ہونا ہے

افسر میرٹھی

MORE BYافسر میرٹھی

    آغاز ہوا ہے الفت کا اب دیکھیے کیا کیا ہونا ہے

    یا ساری عمر کی راحت ہے یا ساری عمر کا رونا ہے

    شاید تھا بیاض شب میں کہیں اکسیر کا نسخہ بھی کوئی

    اے صبح یہ تیری جھولی ہے یا دنیا بھر کا سونا ہے

    تدبیر کے ہاتھوں سے گویا تقدیر کا پردہ اٹھتا ہے

    یا کچھ بھی نہیں یا سب کچھ ہے یا مٹی ہے یا سونا ہے

    ٹوٹے جو یہ بند حیات کہیں اس شور و شر سے نجات ملے

    مانا کہ وہ دنیا اے افسرؔ صرف ایک لحد کا کونا ہے

    مآخذ:

    • کتاب : Jadeed Shora-e-Urdu (Pg. 600)
    • Author : Dr. Abdul Wahid
    • مطبع : Feroz sons Printers Publishers and Stationers

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY