آہ کو چاہیے اک عمر اثر ہوتے تک

مرزا غالب

آہ کو چاہیے اک عمر اثر ہوتے تک

مرزا غالب

MORE BY مرزا غالب

    INTERESTING FACT

    This ghazal is popularly sung and known with radiif "hone tak". However, in diwan of Gaalib, the ghazal is mentioned with radiif "hote tak".

    آہ کو چاہیے اک عمر اثر ہوتے تک

    کون جیتا ہے تری زلف کے سر ہوتے تک

    دام ہر موج میں ہے حلقۂ صد کام نہنگ

    دیکھیں کیا گزرے ہے قطرے پہ گہر ہوتے تک

    عاشقی صبر طلب اور تمنا بیتاب

    دل کا کیا رنگ کروں خون جگر ہوتے تک

    تا قیامت شب فرقت میں گزر جائے گی عمر

    سات دن ہم پہ بھی بھاری ہیں سحر ہوتے تک

    ہم نے مانا کہ تغافل نہ کرو گے لیکن

    خاک ہو جائیں گے ہم تم کو خبر ہوتے تک

    پرتو خور سے ہے شبنم کو فنا کی تعلیم

    میں بھی ہوں ایک عنایت کی نظر ہوتے تک

    یک نظر بیش نہیں فرصت ہستی غافل

    گرمیٔ بزم ہے اک رقص شرر ہوتے تک

    غم ہستی کا اسدؔ کس سے ہو جز مرگ علاج

    شمع ہر رنگ میں جلتی ہے سحر ہوتے تک

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    شبانا کوسر

    شبانا کوسر

    حسین بخش

    حسین بخش

    کندن لال سہگل

    کندن لال سہگل

    مہدی حسن

    مہدی حسن

    استاد برکت علی خان

    استاد برکت علی خان

    متفرق

    متفرق

    اسد امانت علی

    اسد امانت علی

    جگجیت سنگھ

    جگجیت سنگھ

    نامعلوم

    نامعلوم

    بیگم اختر

    بیگم اختر

    Shruti Pathak

    Shruti Pathak

    نامعلوم

    نامعلوم

    RECITATIONS

    شمس الرحمن فاروقی

    شمس الرحمن فاروقی

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    شمس الرحمن فاروقی

    آہ کو چاہیے اک عمر اثر ہوتے تک شمس الرحمن فاروقی

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY